پانچوں انگلیوں سے پانی کے پانچ چشمے جاری

حدیبیہ کے روز سارے لشکرِ صحابہ میں پانی ختم ہوگیا حتیٰ کہ وضو اور پینے کے لئے بھی پانی کا قطرہ تک باقی نہ رہا حضور ﷺ کے پاس ایک کوزہ پانی کا تھا حضور جب اس کوزہ سے وضو فرمانے لگے تو سب لوگ حضور کی طرف لپکے اور فریاد کی کہ یارسول اللہ ! ہمارے پاس تو ایک قطرہ پانی کا باقی نہیں رہا ہم نہ تو وضو کرسکتے ہیں اور نہ ہی اپنی پیاس بجھا سکتے ہیں حضور! یہ آپ ہی کے کوزہ میں پانی باقی ہے ہم سب کے پاس پانی ختم ہوگیا اور ہم پیاس کی شدت سے بے چین ہیں حضور ﷺ نے یہ بات سے کا اپنا ہاتھ مبارک اس کوزہ میں ڈال دیا ۔۔
لوگوں نے دیکھا کہ حضور کے ہاتھ مبارک کا پانچوں انگلیوں سے پانی کے پانچ چشمے جاری ہوگئے اور سب لوگ ان چشموں سے سیراب ہونے لگے اور ہر شخص نے جی بھر کے پانی پیا اور پیاس بجھائی اور سب نے وضو بھی کرلیا حضرت جابر سے پوچھا گیا کہ لشکر کی تعداد کتنی تھی ؟ فرمایا اس وقت ایک لاکھ آدمی بھی ہوتے تو وہ پانی سب کے لئے کافی تھا مگر ہم اس وقت پندرہ سو کی تعداد میں تھے۔سبق: ہمارے حضور ﷺ کو اللہ نے یہ اختیار وتصرف عطا فرمایا ہے کہ آپ تھوڑی چیز کو زیادہ کردیتے ہیں”نہ“ سے ہاں اور معدوم سے موجود کرنا اللہ کا کام ہے اور تھوڑے سے زیادہ کردینا مصطفےٰ کا کام ہے اور یہ اللہ ہی کی عطا ہے۔

loading...
>